Kindly visit:


To contact:
joshuaharoon@gmail.com
cuwapinfo@gmail.com

Saturday, February 15, 2014

Qasir, Nazir

Nazir Qasir
The literary and intellectual bridge of social understanding and literary cooperation between Muslims and Christians of Pakistan, Nazir Qasir has often risen above the petty and meaningless divisions that many unsocial elements would like to sow among the peaceful followers of their respective religions. 

Nazir Qasir was born on 5th of January 1945 in Hooshiyarppur, India. A few days later his mother passed away prompting his father to take him to Jehlam (now in Pakistan) where his father Aziz Masih's close friend, Lalla Ootar Narayan Gujral lived. Nazir Qasir lived and received his early education in the Gujral household, and was treated as one of their own children. (Inder Kumar Gujral, Prime Minster of India, from April 1997 to March 1998, was the son of this same Lalla Ootar Nayan Gujral). At the creation of Pakistan in 1947, Nazir Qasir's father wserved with the peace keeping troops of UNO and chose to stay in Pakistan despite the insistence of the Gujrals to accompany them to India. 

Qasir's literary journey  began in 1958, and in a few short years he began to be appreciated by the literary giants of his time. When in 1968 his book Ankahin, chehra, hath hit the market, he received glowing reviews and compliments form Faiz Ahmad Faiz, Ahmad Nadeem Qasmi, Sufi Tabassam, Nasir Qazmi, Zafar Iqbal, Munir Niazi and other such prominent poets and literary critics.

Qaisar's poetry, like his personality, is inviting and absorbing. I first read his book Zaitoon di Patti during school days, and was impressed by his ability to convey deep concepts and delicate emotions using very simple words and common place phraseology. Indeed I  was not the only one impressed by this master artisan of words, for soon after I learned that  Nazir Qasir was awarded the much coveted  literary prize, the Adam Jee Award. I was overjoyed at the news. 

Many years later in the late nineties I had the privilege of meeting Qasir on several occasions, and found him to be like his books, interesting, gentle and thought provoking.

His published books are:


1. Ankhain, chehara, hath (آنکھیں ، چہرہ ہاتھ ) poetry, 1968.

2. Zaitoon the patti - Punjabi poetry (زیتون دی پتی ) Punjabi poetry, 1979.

3. Teree Duneiya (تیسری دنیا ) long poem, 1979.

4. Gunbad-e-khouf  say basharrat (گنبد خوف سے بشارت ) poetry, 1984.

5. Rujhanat (رجحانات ) collection of articles, 1984.
  
6. Naiy ehd kay geet ( نئے عہد کے گیت ) Christian songs, 1984.

7. Temharay shehar ka maosam (تمھارے شہر کا موسم )  poetry, 1992.

8. Aye shaam humsukhan ho (اے شام ہمسوخن ہو )  poetry, 1995.

9. Haray Krishna (ہرے کرشنا ) long poem, 1993.

10. Qasam fajar day taray dee (قسم فجر دے تارے دی ) Punjabi poetry, 2003.

11. Danish ka buhran (دانش کا بحران) A philosophical treatise, 2004.

12. Muhabat mayra mausam hai ( محبت میرا موسم ہے ) poetry, 2013.

13. Yas'oo (یسوع) novel, 2013.

14. Dhool main dhanak (دھول میں دھنک) Autobiography, in the publication process, ? 2014.

15. Koonjan bharya asman ( کونجاں بھریا آسمان ) Punjabi poetry, 2014.

16. Masihiyat ki tashkeel-e-nau (مسیحیت کی تشکیل نو) An analysis, 2014.

17. Mausam  ( موسم ) Compilation of various works, 2014.

18.  Ay hawa moazan ho ( اے ہوا مؤزن ہو ) poetry, (date not available).

His ghazzals have been sung by the greats of the music world: Ustad Ghulam Ali, sang, woohi palkoon ka japakna woohi jadoo tayray وہی پلکوں کا جھپکنا وہی جادوتیرے ),  Madam Noor Jehan  sang, Aa ja ray, Aa ja mayray pass ray آ جا رے، آ جا میرے پاس رے ) and Gulsha Ara Sayed sang the blockbuster hit ghazzal, Temharay shehar ka maosam (تمھارے شہر کا موسم ).  His other all time favorite which has been sung by various artists is Dewaroon say batein karna acha lagta hai (دیواروں سے باتیں کرنا اچھا لگتا ہے ).

Aa ja ray, Aa ja mayray pass ray was filmed in the Neya Sooraj ( نیا سورج ) which was released in 1977 and become one of the top cinema sensations of its time. 

The following is a  complete list of his  awards.

1. Adam Jee Award
2. Pakistan National Cultural Award
3. Presidential award for literature
4. Loke Adab Award
5. Masood Khadar Poshe Award
6.Urdu Foundation Award
7. Peace Award (European Union)
8. Shawl of Honour from Prime Minister of India

The literary journey of Nazir Qasir continues, and so does the on-going appreciation of CUWAP for this one-of-a kind master of Urdu and Punjabi poetry.

Sunday, December 1, 2013

Christmas 2013

تمام مسیحی شاعروں

 اور ادیبوں

 کے نام ...                                             

آپ سےموادبانہ گذارش  ہے کہ آپ بھی   کرسمس ٢٠١٣ کے اس مبارک تہوار پر
 اپنی تحریروں ، شعروں ، نظموں اور غزلوں سے کوواپ کی ویب سائیٹ کا حصہ  بنیں -آپ کے فن پاروں  کا منتظر، 
اختر انجیلی 
****************************************************

آپ کے ارسال کردہ تحفے ...







اترا ہے دل میں نورخدا مدتوں کےبعد 
آیا ہے جگ میں ابن خدا مدتوں کے بعد 
آنکھوں کو خیرہ کر رہی ہے اس کی تابانی 
دھرتی ہوئی ہے رشک سماں مدتوں کے بعد 
مٹتا ہے فرق نوری و ناری کا اس طرح  
ہوتا ہے فضل رب اعلیٰ مدتوں کے بعد 
بے رنگ سے ،بے کیف سے منظر بدل گئے
اٹھلاتی پھر رہی ہےصبا مدتوں کے بعد 
ورطہ حیرت میں ہے عالم تمام آج 
انسان بن کے آیا خدا مدتوں کے بعد 
تھے راستے معدوم ، نہ رہبر نہ منزلیں 
را ہرو کو ملا راہنما مدتوں کے بعد
شادیانے بج اٹھے دشت کی فضا میں 
آیا ہےشہہ صدق و صفا مدتوں کے بعد 
مغفرت اور معرفت کے باب کھل گئے
ٹوٹا طلسم زور فنا مدتوں کے بعد 
رقصاں ہے آنگنوں میں محبت کی چاندنی 
نکلا ہے ماہ مہر و وفا مدتوں کے بعد 
اک تیرہ تار شب کو نوید سحر ملی 
امرت کی  دعا ہوئی رسا مدتوں کے بعد  

وکٹوریہ پیٹرک امرت 


**************************************

فلک کو محبت سے دھرتی پے لاؤ
بہشت بریں اس زمیں کو بناؤ 
دلوں میں امنگوں کے دیپک جلاؤ 
فرشتوں سے نغمے سنو، تم بھی گاؤ 
بڑے دن کی خوشیاں ہیں مل کے مناؤ 

اتر آۓ دھرتی پے چند اور تارے 

گلابوں کے شبنم نے چہرے نکھارے 
مناظر مگن ہیں ستایش میں سارے
دسمبر میں چلتی ہوئی اے  ہواؤ! 
بڑے دن کی خوشیاں ہیں مل کے مناؤ

محبت کی شمعیں دلوں میں جلا دو 

گلے شکوے چھوڑو ، شکایت بھلا دو 
خطا کس نے کی ہے یہ جھگڑا مٹا دو 
کہ روٹھے ہوؤں کو بھی جا کے مناؤ 
بڑے دن کی خوشیاں ہیں مل کے مناؤ

رہے دل میں بغض و عداوت نہ کینہ 

محبت سے بن جاۓ پتھر ، نگینہ
مسیحا کی آمد کا ہے  یہ  مہینہ
حیات اس مقدس مہینے میں پاؤ
بڑے دن کی خوشیاں ہیں مل کے مناؤ

وہ جاں آفریں ہے، جہاں آفریں ہے

جنم دن مسیحا کا زیب زمیں ہے 
ہے جس گھر میں چرنی وہ خلد بریں ہے 
مسیحا کی آمد ہے سب گھر سجاؤ 
بڑے دن کی خوشیاں ہیں مل کے مناؤ

ہے جیون مسیحا، مسیحا شفا ہے 

وہ آغوش مریم میں اک مئجزہ  ہے 
خدا کی رضا ہے  وہ روح خدا ہے 
کرو اس کو سجدہ  سروں کو جھکاؤ 
بڑے دن کی خوشیاں ہیں مل کے مناؤ
   پریا تابیتا 

  ***************************************************
انتخاب از بشارت عظمیٰ ...


دلوں میں محبت کی جوتیں جگا  دو
اندھیرے دلوں سے اندھیرا مٹا دو 
حدود حقارت مٹا دو ، مٹا دو 
ہاں دیوار نفرت گرا دو، گرا دو
محبت کی دنیا بساۓ محبت 
مجسم ہوا ہے خداۓ محبت  

جہاں کے مریضوں کو مشدعا سنا دو 
جو کچلے ہوۓ ہیں، انھیں بھی بتا دو 
پیام نجات و رہائی سنا دو 
بشارت ہے حکم خداے محبت
مجسم ہوا ہے خداۓ محبت 

یہ بنددوں میں صلح کرنے کا دن ہے 
یہ روٹھے ہوؤں کو منانے کا دن ہے 
پیام بشارت سنانے کا دن ہے 
ہر اک شخص کے کام آنے کا دن ہے
یہی بات ہم کو سکھاۓ  محبت 
مجسم ہوا ہے خداۓ محبت
************************ عمانویل انجیلی      

Saturday, March 9, 2013

The law of lawlessness strikes yet again...

پاکستان : 9  مارچ 2013 ، بروز ہفتہ ،  لاہور ،بادامی باغ کے علا قے، جوزف کالونی  میں 178  مسیحی گھروں اور ان کے ساتھ منسلک کاروباروں کو جلا کر خاکستر کر دیا گیا -

A picture is worth a thousand words.

The law of lawlessness strikes yet again...


We do not cry, for it is truly said,
"Our tears are frozen dry, 
We have no tears to shed!"

Lahore: In Quetta the  Hazara community was targeted for being "Hazara", in Karachi the Shiite community was targeted for being Shiite. So let's just accept the fact that the Christians in Joseph Colony, Badami Bagh, Lahore, were targeted for being Christians.  Xenophobic madness is not an excuse; it is a well thought-out strategy to destabilize Pakistan. Even a casual glance at the history of Pakistan over the last three decades reveals the mathematical predictability of these cowardly acts of destroying Pakistan bit by bit. Cowardly, yes. How else would you describe three to four thousand armed men marching on the houses of 178 unarmed slum dwelling Christians.

Pakistan, according to General Zia ul Haq, the soldier of Islam, is the Castle of Islam. (He is also (dis)credited  with introducing the "blasphemy laws").   And Islam according to Millions of Pakistanis is the Religion of Peace.

Internally nothing has destabilized Pakistan more than the internationally infamous and  controversial laws generally referred to as "the Blasphemy laws". The total price of these laws to the state of Pakistan will always remain  incalculable, for to reach the final figure invaluable factors such as human  lives, international goodwill, inter-community harmony and fear and psychological maladies caused by it need accounted for. There just is no formula to do so, and indeed none can be developed.  However Pakistan in its own way has worked out a formula to deal with situations that keep arising.

1. A petty Christian worker invokes jealousy of a Muslim neighbour by being successful in his own little business.

2. The Muslim neighbour alleges that the Christian has insulted either the religion of Islam or the Holy book of Islam, or the Prophet of Islam. At this stage no further "proof" or "evidence" is needed. All the demands of Law are  supposedly met.

3. A mob is gathered usually in thousands and the verdict of justice is delivered in the form of terror, hell fire and merciless burnings and killings. The world watches....thanks to modern media devices.

4. The President of Pakistan, the PM of Pakistan and other government officials react by "...has taken notice of the events" strategies. A few more slogans like somebody "will be brought to justice", and "a full and comprehensive inquiry will be conducted" etc., etc. Buy time. And in due course another atrocity takes place, and so the cycle continues.

The latest in this cycle of events has occurred on the 9th March 2013.  For details, kindly use the links below.

http://www.thenews.com.pk/article-91548-Lahore:-Christian-homes,-burnt,-plundered-over-blasphemy-row
http://www.miamiherald.com/2013/03/09/3275896/bomb-kills-4-wounds-dozens-in.html

http://www.channelnewsasia.com/stories/afp_asiapacific/view/1258929/1/.html
http://www.thenews.com.pk/article-91547-Lahore:-Christian-homes,-burnt,-plundered-over-blasphemy-row
Thank you very much for your support




Sunday, March 3, 2013

Farhat, Ireen

 
Ireen Farhat
Ms. Ireen Farhat hails from Karachi. She is a prolific writer and has contributed innumerable articles to various newspapers and magazines, inclding; Jang (جنگ ), Naw-e waqt (نواے وقت ) , Jsarat ( جسارت ), Aftab (آفتاب  ),  Na'ee batt  ( نئی بات ),Akhbar-e Jiahan ( اخبار جہاں ) Magazine, Family (فیملی)  Magazine, Ghazi(  غازی  ) Magazine, Dunya-e Adab  (دنیا ادب ) Magazine, The Christ Times   Magazine.
 
She began writing poetry while at school. Her literary journy has continued without any let, and she has published her first book, Hawa ka rukh badalna chahtee houn ( ہوا کا رخ بدلنا چاہتی ہوں ).
 
(Incomplete)
 
 
 
 
   

Thursday, February 28, 2013

Pastor S. A. Ditta now sleeps in the Lord...

آسماں تیری لحد پے گل افشانی کرے ...

Pastor S.A. Ditta

یہ خبر دنیا بھر کی مسیحی کمیونٹی میں نہایت رنج و الم کے ساتھ پڑھی اور سنی جائے گی ، کہ سیونتھ ڈے ایڈ وینٹسٹ کلیسیا کے بزرگ پادری ایس اے دتہ 24 فروری 2013 کوخداوند میں سوگئے اوران کے جسد خاکی کو،  بہت سے سوگواروں کے موجودگی میں، بڑی عزت و احترام کے ساتھ،  28 فروری 2013 بروز جمعرات پاکستان ایڈ وینٹسٹ سمنیری  کے قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا -  

بزرگ پادری ایس اے دتہ صاحب 25 فروری 1935 میں پیدا ہوے تھے ، یوں انہوں نےاٹھتہر برس کی عمر پائی ، جس میں آپ نے بیشتر سال کلیسیائی خدمت میں صرف کیے-


اس خدمت کےدوران آپ  بطور استاد ،مبشر، مدیر(مہنامہ صحت اور مہنامہ قاصد جدید، لاہور  ) اور منتظم مصروف عمل  رہے -جب آپ 1995 میں ریٹائرھووے آپ پاکستان یونین کی صدارت کے عہدے پر فائز تھے   - آپ ایک شفیق باپ، مؤثر استاد، دانا منتظم ہونے کے ساتھ ساتھ ایک مخلص انسان اور خداوند یسو ع مسیح کے سچے پیروکار بھی تھے- ریٹائرمنٹ کے بعد آپ نے 2005  ABC سکول سسٹم کا آغاز کیا جس کے تحت آج تین ہزار سے زائد بچے تعلیم کے زیور سے آراستہ ہو رہے ہیں- یہ سکول بچوں کو تعلیم کی نعمت سے مالا مال کرنے کے ساتھ ساتھ دو سو سے زائد لوگوں کو روز گار بھی فراہم کر رہیں ہیں.ان کی زندگی کے مشن کو پورا کرنے اور ان کے خوابوں کو شرمندہ تعبیر کرنے کی بھاری ذمہ داری اب ان کے چار بیٹوں ، پاسٹر مائیکل دتہ ، مسٹر میکسویل دتہ ، مسٹر]پیٹرک دتہ ، مسٹر فریڈرک دتہ اور ان کے اہلیان خانہ پر ہے- اور ہمیں امید ہے کہ وہ اس امتحان میں ضرور  سرخرو ہونگے -  


ان کے والد محترم کی وفات کے  اس دکھ اور  غم کے وقت میں ہم سب لواحقین کے ساتھ  ان کے دکھ میں برابر کے شریک ہیں اور  خدا سے دعا گو ہیں کہ وہ انہیں صبر جمیل عطا فرماۓ -



 

Sunday, February 17, 2013

Second Edition of Bethlehem Kay Shehr Main


Dr. Yousaf Masih Yad's book Bethlehem Kay Shehr Main (بیت لحم کے شہر میں  )   second edition  is now available in the market. The current includes  updates and three  new articles by the author.


Author: Dr. Yousaf Masih Yad (D.D.)

Publishers: All Pakistan Writers Guild Peshawar (Pakistan)


1st edition, 1997

2nd edition, 2012

pages 110


Price: Pak Rupees 120/=



بیت لحم کے شہر میں تبصرہ نگاروں کی نظر میں

ڈاکٹر یوسف مسیح یاد نے قدیم و جدید علوم سے بھرپور استفادہ کیا ہے اور اس علم کو مسیحی اقدار عالیہ کی ترویج و فروغ کے لیۓ کامیابی کے ساتھ استعمال کر رہیں ہیں .ان کی قابلیت اوت نابغہ شخصیات کے سب سے اہم پہلو ان کی ہقنواز یکسوئی خود ا عتمادی اور راست خدمت کے لئے تخلیقی محسن کو شعا ر حیات بنا کر کل نوع بشر کی حق کے پیغا م کو اس اہمیت کے ساتھ پیش کرنا ہے جو قدر مطلق خداۓ مہربان کے نزدیک قبل پزیرائی ہے .
علامہ ڈاکٹر یوسف مسیح یاد کی زیر نظر تخلیقی کاوش "بیت لحم کے شہر میں " مسیحی تواریخ کی ان صداقت آشنا بنیادوں پر نقش جاوداں کا درجہ رکھتی ہے جس کی بدولت نا شناس حق لوگ اپنی فلاح و بقا کے لیے سچی راہوں کا تعین کرنے میں رہنمائی پا سکیں گے ...

ڈاکٹر مضطر کا شمیری 
*****

 "بیت لحم کے شہر میں " کرسمس کے  تاریخی رائج رسومات کی جا مع اور کلیدی حیثیت رکھتی ہے. کرسمس کے ایام میں علما پاسبان بھی اس کتاب کی تحریرات سے خود بھی مستفید ہوتے  اور کلیسیا کو بھی مستفید کرتے ہیں .کیونکہ ڈاکٹر صاحب نے کرسمس کی رسومات کی ما لا پرو کر کتاب میں درج کر دی ہے. 

اس کے علاوہ بیت لحم کی جغرافیائی حدود اربحہ اور ان شخصیات کا بھی ذکر کیا ہے جن کا اس شہر سے واسطہ رہا ہے . چرنی، چرنی چوک، بیت سا حور ، خواتین کا گرجہ ، پیدائش گرجہ کا بڑی عمدگی سے ذکر کیا ہے... 


پادری فیاض مسیح چنا
*****

... یاد صاحب نے ہمارے ہاں کے تمام پہلوانی ادب پیدا کرنے والے حضرات کی نسبت وہ  موضوع چھیڑے ہیں جن پر کوئی قلم نہیں اٹھاتا -کیونکہ انھیں تحقیق اور غوطہ زنی کی عادت نہیں - ان موضوعات میں کرسمس کارڈ ، کرسمس ٹری ،مختلف ممالک  میں کرسمس اور خصوصی توڑ پر ٢٥ دسمبر پر ان کا نیا نظریہ  اور دیگر بہت سے موضوع ہیں جو کہ انہوں نے اس کتاب میں شامل کیے ہیں - ...

ریورنڈ  ڈاکٹر جوزف سی لعل  
*****

تاریخ نویسی محنت طلب فن اور  بہت مشکل علم ہے. اور تاریخ دانی اس سے کہیں بڑھ کر مشکل تر ہے - مگر ڈاکٹر یوسف مسیح یاد  نہ صرف تاریخ نویسی کے ماہر اور تاریخ دان ہیں بلکہ تاریخ فہمی اور تاریخی واقعیات کی اصلیت (historicity) تک پہنچنے میں بھی کمال رکھتے ہیں -

ان کی یہ کتاب "بیت لحم کے شہر میں " اس بات کی دلیل ہے کہ وہ تاریخی  جواہر کی تلاش  میں فضول اور کم قیمت پتھروں ایر کنکروں کو نظر انداز کرنے کا سلیقہ خوب جانتے ہیں - ان کا یہی ہنر انھیں معلومات کی کانوں سے ایسے دید ہ زیب اوربیش بہا معدنیاتی  ٹکڑے جمح کرے میں رہنمائی کرتا ہے جو علمیت ، تاریخیت ، منطق ، فلسفے ، جغرافیہ ،علم ریاضی ، اور علم الہی کی کسی بھی کسوٹی پر پرکھنے پر ہمیشہ خالص سونا ثابت ہوتے ہیں -

تاریخ دانی صرف تاریخی واقعا ت  کو  وقت کی رو سے  ترتیب وار بیان کر دینے کا نام ہی نہیں بلکہ اہم واقعات  کی انفرادی اور مجموئی اہمیت کو ان کے آفاقی سیاق و سبا ق میں پہلے خود  سمجھنے اور پھر دوسروں کو سمجھا نے کی غرض سے انہیں منطقی اور رواں پیراے میں آراستہ کرنے کا فن ہے -ڈاکٹر یاد کی یہ چھوٹی سی  کتاب کائنات کے سب سے بڑے معجزاتی واقعہ ، یعنی  خدا کے انسانی شکل میں آنے کی تاریخی  حقیقت پر روحانی ، فلسفائی ،ثقافتی اور ادبی جھلکیاں پیش کرتی ہے. ...


اختر انجیلی   


*****

Monday, February 11, 2013

Prof. Aslam Ziai (Obituary)

اک چراغ اور بجھا ، اور بڑھی تاریکی

یہ خبر دنیا بھرکے مسیحیوں کے لیے رنج و الم کا سبب ہے کہ جناب ڈاکٹر اسلم ضیای صاحب طویل علالت کے بعد یکم فروری 2013  کو خداوند کےاطمینان میں داخل ہوگئے - آپ کے جسد خاکی کو  دو فروری کو گوجرانوالہ میں سینکڑوں سوگواروں  کی آہوں اور سسکیوں  کے ہمراہ سپرد خاک کر دیا گیا. پروفیسرصاحب کی کمی آنے والے سالوں بلکہ صدیوں تک محسوس کی جائے گی. 

Sunday, November 18, 2012

Christmas Celebrations 2012 (Pakistan)


The following pictures  of Christian children acting in Nativity plays were submitted by Pastor Haroon Nazir.
It is hoped that the message of peace and goodwill will remain with us throughout the whole year, and indeed for the years to comes.

                         






                                           









Sunday, November 11, 2012

تصویری خبرنامہ
اکتوبر30  سے نومبر 1  تک گھکھڑ منڈی (پنجاب ) میں ہونے والی مسیحی عبادات کی چند جھلکیاں :
Pastor Haroon Nazir, -------------, Pastor Joseph Zahid, Pastor Sabir Sadiq, Mr. Zulifqar Anwar, and Dr. Nazir Gill













Monday, August 6, 2012

            
  تصویری  خبرنامہ 


On   28th  July 2012, Dr. Jacob Paul,  the honourable advisor to the Prime Minister of Pakistan, graced with his presence the auspicious occasion of the 49th Anniversary celebrations of the Seventh-day Adventist Church, Ghakhar Mandi, Gujranwala.  Following are  a few snapshots of this memorable event.
Dr. Nazir Gill  expressing  his views

Dr. Jacob Paul Bhatti addressing the gathering.

A memorable moment, Pastor Ijaz Gill (of cuwap.org) posses  between  Dr. Jacob Paul Bhatti and Pastor Haroon Nazir

In addition to men hundreds of women and children came to  celebrate the church event and  to listen  to
Dr. Jacob Paul Bhatti's message

Dr. Jacob Paul reassuring the gathering of his continued support for the Seventh-day Adventist Church of Ghakhar Mandi, Gujranwala